بین الاقوامی

سڈنی: آسٹریلیا نے الجزائر میں پیدا ہونے والے ایک مسلمان عالم دین کی شہریت منسوخ کردی ہے

عبد الناصر بینبریکا وہ پہلے فرد ہیں جن سے آسٹریلیا میں رہتے ہوئے شہریت چھین لی گئی ہے۔

آسٹریلیا کے وزیر برائے امور داخلہ پیٹر ڈوٹن نے برسبین میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ اگر یہ وہ شخص ہے جس سے ہمارے ملک کو دہشت گردی کا خطرہ لاحق ہے، تو ہم آسٹریلین عوام کے تحفظ کے لیے آسٹریلین قانون کے تحت ہر ممکن کوشش کریں گے۔

اسکو کو دہشت گردی کے تین الزامات کے تحت سزا سنائی گئی تھی، انہیں ایک دہشت گرد گروہ کی ہدایت کرنے، کسی دہشت گرد گروہ کا رکن ہونے اور دہشت گردی کے کسی اقدام کی منصوبہ بندی سے وابستہ مواد رکھنے کے الزام میں 15 سال قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

وہ اپنی سزا پوری کرنے کے باوجود آسٹریلین جیل میں موجود ہیں، آسٹریلین قانون کینبرا کو اس بات کی اجازت دیتے ہیں کہ وہ دہشت گردی کے جرائم میں سزا یافتہ کسی بھی شخص کی سزا پوری ہونے کے بعد بھی مزید تین سال تک اسے نظربند رکھ سکتے ہیں۔

اسکے وکلا نے ان کی نظربندی کے خلاف اپیل کی ہے، ان کے پاس 90 دن کا وقت ہے کہ وہ اپنا ویزا منسوخ کر کے الجیریا واپس جانے کی اپیل کریں۔

وھاں کے قانون کے تحت کسی شخص سے صرف اس وقت اپنی شہریت چھین دی جاسکتی ہے جب وہ دوہری شہریتے کا حامل ہو۔

جبکہ آسٹریلیا نے ان اختیارات کا استعمال 2019 میں ترکی میں قید داعش کی جانب سے کے مبینہ طور پر بھرتی کیے گئے نیل پرکاش کی شہریت چھیننے کے لیے کیا تھا، آسٹریلیا نے استدلال کیا تھا کہ وہ دوہری شہری ہے کیونکہ ان کے پاس فجی کی شہریت بھی ہے حالانکہ فجی نے اس دعوے کی تردید کی ہے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *