315

کیمرے نہ حکومت نے لگائے نہ اپوزیشن نے پھر کہاں سے آئے؟شیخ رشید نے بتا دیا

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، این این آئی ) وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ خریدنے اور بکنے والوں کی معاشرے میں کمی نہیں، انتخابات اوپن بیلٹ سے ہونے چاہئیں۔ عمران خان چیخ رہے تھے کہ انتخابات اوپن بیلٹ ہونے چاہئیں مگر ان دونوں بڑی پارٹیوں نے مخالفت کی،ان دونوں پارٹیو ں نے سی او ڈی پردستخط کررکھے ہیں،انکا کہنا تھا کہ سینیٹ انتخابات میں ن لیگ نے ٹکٹ بیچنے کی بات فضول میں کی۔موجودہ صورتحال میں الیکشن کمیشن کی ذمہ داریوں پر بات کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ

میں سمجھتا ہوں کہ الیکشن سسٹم بری طرح متاثر ہوا ہے، کوئی جیتے یا ہارے الیکشن سسٹم ہار گیا ہے۔ شیخ رشید کا کہنا تھا کہ میں 50سال سے دیکھ رہا ہوں ہارنے والاہار تسلیم نہیں کرتا،80ہزار کی برتری سے جیتیں تو پھر بھی اگلا بندہ پٹیشن دائر کردیتا ہے۔ ہارتسلیم نہ کرنے سے ٹکرائوکی صورتحال پیدا ہوتی ہے۔ جمالی صاحب ایک ووٹ سے جیتے وہ ایک ووٹ ہی سے وزیر اعظم بنے تھے۔انہوں نے کہا کہ حفیظ شیخ کے خلاف ساری خریدوفروخت آصف علی زرداری نے کی،آصف زرادی نے ہی تاش کے پتے پھینکے اور بانٹے۔سینٹ ہال میں پولنگ بوتھ کے اوپر سے برآمد ہونے والے خفیہ کیمروں کے متعلق سب کی رائے یہی ہے کہ کیمرے پہلے سے موجود تھے کسی نے اب نہیں لگائے۔دوسری جانب وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹرشبلی فراز نے سینیٹ کے پولنگ بوتھ میں کیمرے لگانے کی تحقیقات کا عندیہ دیتے ہوئے کہاہے کہ متعلقہ لوگوں کو بے نقاب کریں گے،پیسا استعمال کرنا، دھونس استعمال کرنا اپوزیشن کی سیاست کے بنیادی اصول ہیں، اپوزیشن کرپشن بچانے کیلئے جدوجہد کررہی ہے ۔جمعہ کو پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شبلی فراز نے کہاکہ ہم نے انتخابات کی شفافیت کی پوری کوشش کی جب کہ ووٹ خراب کرنے کی ترغیب علی حیدر گیلانی نے دی۔انہوںنے کہا کہ اپوزیشن ارکان کی سازش سامنے آئی ہے، پیسے سے سیاست کو کاروباربنانے والے بے نقاب ہوں گے، اپوزیشن نے ڈرامہ رچایا، ہم بتائیں گے کہ کون ایجنٹس ہیں جو پی پی اور ن لیگ کی پراکسیز ہیں۔پولنگ بوتھ سے کیمرہ نکلنے سے متعلق سوال پر شبلی فراز نے کہاکہ ہم چاہتے ہیں کہ اس معاملے کی پوری تحقیقات ہونی چاہیے اور پولنگ کے لیے نیا بوتھبنایا جائے۔وفاقی وزیر نے کہاکہ ان لوگوں (اپوزیشن) نے قومی اسمبلی میں کم تعداد کے باوجود الیکشن جیتا، سب کو پتا ہے کون پیسے لے کر اسلام آباد میں گھوم رہا تھا۔انہوںنے کہاکہ ہم نے شفاف انتخابات کے لیے ہر طریقہ اپنایا، یہ لوگ چوری بھی کرتے ہیں اور ایف آئی آر بھی کرواتے ہیں۔سیاست کو کاروبار بنانے والے ایکسپوز ہو گئے ہیں، بلیک میل کرنا اور دھونس دھاندلی ان کی سیاست کے ستون ہیں۔شبلی فراز نے کہاکہ اپوزیشن والے اوپن ووٹ کی مخالفت اس لیے کر رہے تھے کہ یہ ووٹ کے خریدار ہیں، ہماری جدوجہد ہے کہ کرپٹ ٹولے سے ملک کو نجاتدلائی جائے جبکہ یہ لوگ اپنی کرپشن بچانے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔انہوںنے کہاکہ ہماری اور ان کی جیت میں فرق ہے، ہمارے 180 ممبران تھے اور ان کے 150 ممبران تھے تاہم ہمارا امیدوار ہار گیا، میرا یہی سوال ہے کہ ہم قومی اسمبلی میں اکثریت کے باوجود کیسے ہار گئے؟ہم تہہ تک جائیں گے اور جس نے یہ کیا انہیں بے نقاب کریں گے۔پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ یوسف رضا گیلانی نے آصف علی زرداری کو بچانے کے لیے استعفیٰ دیا، یوسف رضا گیلانی نے لیڈر شپ کو ترجیح دی اس لیے نا اہل ہوئے، جب تک اوپن بیلٹ نہیں ہو گا، یہ لوگ اس طرح کی چیزیں کرتے رہیں گے، سینیٹ میں اوپن ووٹنگ نہیں ہو گی تو ایسے حربے استعمال ہوں گے۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں