22

اداروں کی تحقیقات میں جہانگیر ترین کرپشن میں بھی ملوث پائے گئے ہیں ، پی ٹی آئی کے سینئر رہنماکا انکشاف

اسلام آباد (مانیٹرنگ دیسک /این این آئی )پی ٹی آئی سینئر رہنما نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان اور جہانگیر ترین کے مابین ملاقات کے بعد اداروں پر دبائو آئے گا ۔ نجی ٹی وی پروگرام میں تحریک انصاف کے رہنما علی امین گنڈا پور نے گفتگو کرتے ہوئے انکشاف کیا ہے کہ اداروں کی جانب سے دی جانیوالی رپورٹس کے مطابق جہانگیر ترین کرپشن میں بھی ملوث پائے گئے ہیں ۔ انکا کہناتھا کہوزیراعظم سمیت کابینہ اس کیس میں مداخلت نہیں کرے گی ۔ انہوں نے شہباز شریف کی رہائی پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ ن لیگ کے

صدر کیخلاف ثبوت موجود تھی لیکن انہیں پھر بھی ضمانت مل گئی ہے ۔ پاکستان میں وائٹ کالر کرائم ثابت کرنا مشکل ہے۔دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف کے سینئر مرکزی رہنما جہانگیر ترین اسلام لاہور سے اسلام آباد پہنچ گئے ، حامی اراکین اسمبلی کے گروپ کے ہمراہ دو روز تک وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات متوقع ہے ۔ جہانگیر ترین اور ان کے صاحبزادے علی ترین پر ایف آئی اے کی جانب سے مقدمات کے اندراج کے بعد اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کے اراکین جہانگیر ترین کی حمایت میں سامنے آئے تھے اور انہوں نے غیر اعلانیہ ایک گروپ بھی تشکیل دیدیا ہے ۔ مذکورہ گرو پ کی جانب سے اپنے تحفظات سے آگاہ کرنے کیلئے وزیراعظم سے ملاقات کا مطالبہ کیا گیا تھا اور اس کے بعد کچھ وفاقی وزراء بھی اس معاملے کو کشیدگی کی نہج تک پہنچنے سے روکنے کے لئے متحرک ہو گئے تھے۔ جہانگیر ترین کے حامی گروپ کی جانب سے کسی کمیٹی سے ملاقات کی بجائے وزیر اعظم عمران خان سے براہ راست ملاقات کے اصرار پر امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ آئندہ دو روز تک ان کی وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات ہو سکتی ہے ۔ جہانگیر ترین اور ان کے حامی اراکین کا گروپ وزیراعظم کو اپنے تحفظات سے آگاہ اورغیر جانبدارانہ اور شفاف تحقیقات کا مطالبات پیش کرے گا۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں