15

بھارت پاکستان کوبلیک لسٹ میں شامل کروانے میں ناکام ہو گیا

اسلام آباد (این این آئی)وزیرخارجہ مخدوم شاہ محمودقریشی نے کہا ہے کہ بھارت پاکستان کوبلیک لسٹ میں شامل کروانے میں ناکام رہا،رواں سال جون تک ہم انشاء اللہ باقی تین پوائنٹس پر بھی عملدرآمد کر لیں گے ۔وزیرخارجہ مخدوم شاہ محمودقریشی نے ایف اے ٹی ایف اور سیز فائر معاہدے کے حوالے سے اپنے بیان میں کہاکہ اللہ کے فضل سے بھارت کوناکامی ہوئی،بھارت پاکستان کوبلیک لسٹ میں شامل کروانے میں ناکام رہا،ہم نے قانون سازی سمیت اس حوالے سے بھرپور کاوشیں کیں ۔وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہاکہ ہماری کاوشیں اس بات کی غمازی کر رہی ہیں

کہ پاکستان ٹیررفنانسنگ اورمنی لانڈرنگ کیخلاف سنجیدہ ہے ،وہ خود اس بات کے معترف ہیں کہ پاکستان نے27میں سے24پوائنٹس پر مکمل عملدرآمد کرلیاہے،رواں سال جون تک ہم انشاء اللہ باقی تین پوائنٹس پر بھی عملدرآمد کر لیں گے ۔ وزیر خارجہ نے کہاکہ پاکستان نے یہ اقدامات صرف ایف اے ٹی ایف کیلئے نہیں بلکہ اپنے قومی مقاصد میں کیے ہیں ،ہم نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بھاری قیمت چکائی ہے ،بھارت، ایف اے ٹی ایف کو سیاسی مقاصد کیلئے استعمال کرتا ہے ،بھارت کو ایک مرتبہ پھر ناکامی ہوئی ۔وزیر خارجہ نے کہا کہ ایف اے ٹی ایف اجلاس میں 13 ممالک نے پاکستان کے اقدامات کو سراہا ۔ انہوںنے کہاکہ ڈی جی ایم او کا رابطہ، اور سیز فائر معاہدے کی پاسداری پر آمادگی مثبت قدم ہے ،بھارت کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزیاں کی جاتی رہیں – 2008 کے بعد ان کی شرح میں اضافہ ہوا۔انہوںنے کہاکہ بھارت کی جانب سے سیزفائر معاہدیکی خلاف ورزی سے لاین آف کنٹرول پر بسنے والے معصوم کشمیری بری طرح متاثرہوئے ،بھارت کی جانب سیاندھادھندفائرنگ کی جاتی رہی ،یہ پیشرفت خوش آئندہ ہے،اس سے لوگوں کوتحفظ ملے گا۔شاہ محمود قریشی نے کہاکہ معاملات میں بگاڑ بھارت کی جانب سیپیدا کیا جاتا رہا ۔ انہوںنے کہاکہ بھارت مسئلہ کشمیر کے حوالے سے اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قراردادوں سے انکار نہیں کر سکتا ، وہ ریکارڈ کا حصہ ہیں۔ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہاکہ موجودہ بھارت سرکار نے کشمیریوں پر مظالم کی انتہا کردی مگر انہیں اپنے مقاصد کے حصول میں ناکامی ہوئی ،پاکستان پہلے دن سے کہہ رہاہے کہ مسائل کے حل کیلئے مذاکرات ہی ممکنہ راستہ ہیں ۔ انہوںنین کہاکہ امریکن پاکستان پبلک افیرز کمیٹی نے اپنی قرارداد میں امریکہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مظلوموں کی دادرسی کیلئے ان کی آواز بنے ۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں