36

این اے 75 کے ضمنی انتخاب میں پریزائیڈنگ افسروں کے اغواء کا الزام، پریذائیڈنگ افسر اور تھیلے بھی غائب ہوئے،پولیس خاموش تماشائی بنی کھڑی رہی،تہلکہ خیز دعویٰ

اسلام آباد (این این آئی)پاکستان مسلم لیگ (ن )کے رہنما اور سابق وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی نے سیالکوٹ کے حلقہ این اے 75 کے ضمنی انتخاب میں پریزائیڈنگ افسروں کے اغواء کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ پریذائیڈنگ افسر اور تھیلے بھی غائب ہوئے،پولیس خاموش تماشائی بنی کھڑی رہی، بھونڈے طریقے سے الیکشنچوری کرنے کی کوشش کی گئی،ڈسکہ میں مشیر، معاونِ خصوصی اور وزراء اسلحے کیساتھ گھومتے رہے، کوئی پوچھنے والا نہیں،جب تک ووٹ چوری ہوگا، آر او اغواء ہوں گے، ملک نہیں چل سکتا، الیکشن کمیشن آئین کے تحت ذمے داری پوری کرے۔ ہفتہ کو میڈیا

سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیرِ اعظم اور مسلم لیگ نون کے رہنما شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ سیالکوٹ کے این اے 75 پر بدترین دھاندلی ہوئی، پولیس خاموش تماشائی بنی کھڑی رہی، بھونڈے طریقے سے الیکشن چوری کرنے کی کوشش کی گئی۔شاہد خاقان نے کہا کہ حلقے کے 361 پولنگ اسٹیشن ہیں، 341 کا رزلٹ آگیا، 20 پولنگ اسٹیشن کا رزلٹ نہیں آیا، یہ 20 پولنگ اسٹیشن ریٹرننگ آفیسر کے دفتر سے 15 سے 20 کلو میٹر دور تھے، 20 پریذائیڈنگ آفیسر بھی غائب ہوگئے، لوگ بتاتے ہیں کہ سویلین کپڑوں اور گاڑیوں میں لوگ آئے اور پریزائیڈنگ افسران اور تھیلے لے گئے۔انہوں نے کہا کہ آر او کے دفتر سے 20 کلو میٹر دور موجود 20 پولنگ اسٹیشنوں کا رزلٹ نہیں آیا جبکہ 70 کلو میٹر دور کے پولنگ اسٹیشنوں کا نتیجہ پہنچ گیا، عینی شاہدین کے مطابق 20 پولنگ اسٹیشنوں پر سویلین افراد آئے اور پرائیوٹ گاڑیوں میں عملے کو بٹھا کر لے گئے۔سابق وزیرِ اعظم نے کہا کہ ہم نے پولنگ کے لیے اضافی وقت مانگا تھا، لیکن وقت نہیں دیا گیا،الیکشن میں فیصلہ عوام کو کرنے دیں، پریزائیڈنگ افسر اور تھیلے ووٹنگ ختم ہونے کے 13 گھنٹے بعد ریٹرننگ افسر کے پاس پہنچے، ڈسکہ میں مشیر، معاونِ خصوصی اور وزراء اسلحے کیساتھ گھومتے رہے، انہیں کوئی پوچھنے والا نہیں۔شاہد خاقان عباسی نے کہاکہ جب تک ووٹ چوری ہوگا، آر او اغواء ہوں گے، ملک نہیں چل سکتا۔انہوں نے کہاکہ جنرل الیکشن سے کچھ نہیں سیکھا گیا اور اب ضمنی الیکشن میں بھی ہم دھاندلی کر رہے ہیں، الیکشن کا عملہ پولنگ ختم ہونے کے 13 گھنٹے بعد آر او کے پاس پہنچا، ہم کب ووٹ کو عزت دیں گے؟ آج پورا پاکستان کہہ رہا ہے کہ ووٹ کو عزت دو۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے رزلٹ تو روک دیا ہے لیکن اب دیکھتے ہیںآگے کیا ہوتا ہے، بدترین دھاندلی کی گئی، پولیس خاموش تماشائی بنی رہی، من پسند پولنگ اسٹیشنوں پر پولنگ روکی گئی، پولنگ کے اضافی وقت کی درخواست الیکشن کمیشن نے مسترد کر دی۔رہنما (ن)لیگ نے کہا کہ ریٹرننگ آفیسر کوئی بات سننے کو تیار نہ تھے، شدید دبائو کا شکار تھے، انہوں نے بہانے پیش کیئے، کسی نے کہا کہ عینک گم ہوگئی تھی، کسی نے کہا نیند آگئی تھی، 20 پولنگ اسٹیشنز پر 88 فیصد پولنگ ہوئی ہے، پریذائیڈنگافسران ٹکڑیوں کی شکل میں صبح آر او آفس پہنچے۔انہوں نے کہا کہ جب یقین ہو کہ ملک میں قانون نہیں تو ایسے کام کیئے جاتے ہیں، پوری انتظامی مشنری بے بس کھڑی ہے، جب تک الیکشن چوری ہوتا رہے گا ملک نہیں چل سکتا۔ انہوںنے کہاکہ الیکشن کمیشن آئین کے تحت ذمے داری پوری کرے۔سابق وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ہمارا الیکشن چوری ہوا تھا، الیکشن کمیشن کا عملہ چوری ہو گیا، ووٹ کاسٹ ہونے کے بعد الیکشن کمیشن کا ہو جاتا ہے۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں