40

میٹرک پاس رکن اسمبلی کو 2 وزارتیں مل گئیں

پشاور (آن لائن) امیر جماعت اسلامی خیبر پختونخوا سینیٹر مشتاق احمد خان نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت نے تمام اداروں کو تباہ کردیا ہے،سرکاری ملازمین ہڑتال پر ہیں،عوام روز احتجاج کررہے ہیں،دوائیوں کی قیمتوں میں پانچ سو فیصد اضافہ کردیا گیا،معیشت مائنس پر آچکی ہے،مہنگائی نے عوام کا جینامحال کردیا ہے، معیشت آئی ایمایف کے ہاتھ میں چلی گئی ہے،تمام معاشی ادارے سامراجی قوتوں کے ہاتھوں میں چلے گئے ہیں،بجلی کی قیمتیں روز انہ کی بنیاد پر اضافہ ہورہا ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے المرکز الاسلامی پشاور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ پریس کانفرنس

میں جماعت اسلامی کے صوبائی سیکرٹری جنرل عبدالواسع اور ڈپٹی سیکرٹری جنرل صہیب الدین کاکاخیل بھی موجود تھے انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ابھی تک صرف 38 ہزار لوگوں کو کورونا ویکسین لگا چکی ہے،موجودہ حکومت خود سیاسی کورونا ہے،یہ غریبوں کی حکومت نہیں اشرافیہ کی حکومت ہے، پارلیمنٹ کا روزانہ خرچہ چار کروڑ روپے ہے لیکن حکومت آرڈیننسز پر چل رہی ہے، تاریخ میں پہلی بار صرف ایک آدمی کی ملازمت کے لئے صدارتی آرڈیننس جاری کیا گیا ہے، میٹرک پاس اکبر ایوب کو قانون کی وزارت دے دی گئی ہے۔یاد رہے کہ اکبر ایوب کے پاس اس سے قبل وزارت بلدیات کا قلمدان بھی ہے۔ شیخ رشید کا سرکاری ملازمین پر ایکسپائرڈ آنسو گیس کے شیل استعمال کرنے کے حوالے سے بیان شرمناک اور توہین آمیز ہے، افسوس کا مقام ہے کہ انسانی اور بشری حقوق سے نابلد شخص کو وزیر داخلہ بنادیا گیا ہے۔سینٹ الیکشن میں چینی،آٹا،سیگرٹ مافیا غالب ہیں،پی ٹی آئی نے ایسے امیدواروں کو سینیٹ کے ٹکٹ دئے ہیں جنکے نام پانامہ پیپرز میں شامل ہیں۔ سینٹ الیکشن سے پہلے اے ٹی ایم مشین فعال ہوچکے ہیں،عبدالحفیظ شیخ کب سے پی ٹی آئی کے ممبر بنے ہیں،ویڈیو سیکنڈل کی تحقیقات عدلیہ سے کرانی ہوگی،حکومت نے تمام اداروں کو تباہی کے دھانے تک پہنچایا ہے،پرویز خٹک اوراسدقیصر کو ویڈیوسکینڈل کے عدالتی کمیشن میں شامل کیاجائے،ان لوگوں نے سیاست کو گندا کردیا ہے،ویڈیوسیکنڈل کی تحقیقات بہت ضروری ہیں،جماعت اسلامی نے اپنے چار امیدوار سینیٹ کے انتخاب کے لئے میدان میں اتارے ہیں، الیکشن کمیشن نے ہمارے تمام امیدواروں کی کاغذات کلئیر قرار دئے ہیں، سینیٹ انتخابات میں مذاکرات اور سیٹ ایڈجسٹمنٹ کے لئے ہمارے دروازے اپوزیشن جماعتوںکے لئے کھلے ہیں۔ سینیٹر مشتاق احمد خان نے کہا کہ حکومت لاپتہ افراد کی بات کرتی ہے لیکن عافیہ صدیقی کا نام تک نہیں لیتی،عافیہ صدیقی کی رہائی میں موجودہ حکومت سب سے بڑی رکاوٹ ہے،لاپتہ افراد کا ہونا ریاستی دہشت گردی ہے،لوگوں کو اغواء کیا جاتا ہے پھر مار دیا جاتا ہے،ریاستیں ایسے نہیں چلتیں۔ انہوں نے کہا کہحکومت کو گرانے کے لئے احتجاج پی ڈی ایم کا حق ہے، لیکن جماعت اسلامی پی ڈی ایم کا حصہ بننے کے بجائے اپنے پلیٹ فارم سے حکومت کے خلاف احتجاج جارے رکھے گی۔ ہم اپنے جھنڈے، منشور اور قیادت کے ساتھ احتجاجی تحریک چلائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ حکومتی پالیسیوں سے سرکاری ملازمین سمیت ہرطبقہ متاثر ہوا ہے۔ جس حساب سے مہنگائی بڑھی ہے اس حساب سے تنخواہیں نہیں بڑھائی گئیں۔ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ اور مہنگائی میں کمی کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ سینیٹ کے شفاف انتخابات جماعت اسلامی کا مطالبہ ہے، امیدواروں کی خریدو فروخت کو روکنے کے لئے اقدامات اٹھائے جائیں۔

موضوعات:

نیا شوکت عزیز

”ہماری مشکلات شروع ہی میں سٹارٹ ہو گئی تھیں‘ میاں نواز شریف جیل میں تھے‘ خزانہ خالی تھا‘ دوست ملکوں نے ہاتھ کھینچ لیا تھا اور مغربی اتحادیوں نے فوجی حکومت کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا تھا‘ ہم نے اوپر سے جلدبازی میں اینٹی کرپشن مہم بھی شروع کر دی‘ جنرل مشرف پہلے احتساب پھر سیاست ….مزید پڑھئے‎

”ہماری مشکلات شروع ہی میں سٹارٹ ہو گئی تھیں‘ میاں نواز شریف جیل میں تھے‘ خزانہ خالی تھا‘ دوست ملکوں نے ہاتھ کھینچ لیا تھا اور مغربی اتحادیوں نے فوجی حکومت کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا تھا‘ ہم نے اوپر سے جلدبازی میں اینٹی کرپشن مہم بھی شروع کر دی‘ جنرل مشرف پہلے احتساب پھر سیاست ….مزید پڑھئے‎



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں