33

جہاز تباہ ہونے سے 30 سیکنڈ پہلے جھٹکا لگا، اندازہ ہوگیاتھا بچنے کی کوئی صورت نہیں، اس وقت زندگی میں کی گئی ایک غلطی یاد آئی ۔۔۔ بینک آف پنجاب کے صدر ظفر مسعودکے اہم انکشافات

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)بینک آف پنجاب کے صدر ظفر مسعود نے کہا ہے کہ پاکستانی معیشت ٹھیک کرنے کا کوئی آسان فارمولا نہیں ، ایف بی آر، پی آئی اے، پاکستان ریلوے، واپڈا اور ڈسکوز میں اصلاحات ضروری ہیں، کچھ اداروں کی نجکاری تو کچھ اداروں کو اپنے پاس رکھ کر ڈیلیور کرنا ہو گا، وزیراعظم عمران خان نے بھی مجھے کہا ہے کسی سیاسیدبائو میں نہ آئیں، پی آئی اے طیارہ حادثے میں میرا زندہ بچ جانا ایک معجزہ ہے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کیا، ظفر مسعود نے گفتگو کرتے ہوئے

مزید کہا کہ جہاز کریش ہوا تو میں بیہوش ہوگیاتھا مجھے ہوش آیا تو ریسکیو ہوچکا تھا، اللہ تعالی کا شکر ہے اس نے مجھے وہ ہولناک وقت نہیں دکھایا ورنہ مجھ پر اس کے نفسیاتی اثرات بہت خراب ہوتے، میری سیٹ کے سامنے ہی کاک پٹ کا دروازہ تھا،حادثے سے تیس سیکنڈ پہلے ایک جھٹکا لگا جس سے کاک پٹ کا دروازہ کھل گیا، میں نے آگے دیکھا تو اندازہ ہوگیا کہ جہاز نوزڈرائیور کررہا ہے اب کریش سے بچنے کی کوئی صورت نہیں ہے، اس وقت میری نظروں کے سامنے میری پوری زندگی گھوم گئی، مجھے اس وقت اپنی ایک غلطی یاد آئی کہ میں نے اپنی لائف انشورنس ایکٹیویٹ نہیں کرائی، میں نے شادی نہیں کی اس لئے وہ پیسے میری والدہ کو مل جاتے، اس وقت مجھے اندر سے آواز آئی کوئی بات نہیں جہاز تو کریش کرے گا مگر تم بچ جائوگے۔ ظفر مسعود کا کہنا تھا کہ ان تیس سیکنڈ نے میری زندگی کارخ ہی تبدیل کر کے رکھ دیا، لوگوں نے مجھے وہاں بے لوث طریقے سے ریسکیو کیا، مجھے احساس ہوا کہ لوگ اچھے ہوتے ہیں ہم لوگ کبھی غصہ کرجاتے ہیں، اس ڈیڑھ گھنٹے میں لوگوں کو اپنے لئے بے لوثدعائیں کرتے دیکھا، میرا خاندان شاعروں اور ادیبوں کا ہے لیکن کامیاب بینکرز بھی رہے ہیں، میرے چچا انور سعید، تایا ممتاز سعید، پھوپھا قمر سعید کامیاب بینکر رہے ہیں، والد منور سعید ملک کے ممتاز اداکار ہیں جبکہ والدہ سابق ایڈیٹر سید تقی صاحب کی بیٹی ہیں۔ظفر مسعود نےکہا کہ میں نے اپنا کیریئر امریکن ایکسپریس سے شروع کیا تھا، دبئی اسلامک بینک، بارکلے بینک اور پنجاب بینک کے علاوہ سٹی بینک میں بھی کام کرچکا ہوں، پاکستان میں پانچ سال برج کیپٹل کے نام سے اپنا بزنس بھی کیا، یہ پرائیویٹ ایکویٹی انوسٹمنٹ ایڈوائزری بزنس تھا، اسی دوراناسٹیٹ بینک آف پاکستان کے بورڈ پر رہا،2016 میں نیشنل سیونگز کا ڈائریکٹر جنرل بن گیا تھا،پاکستان میں جتنا مرضی کوڑا پڑا ہو یا سڑک ٹوٹی ہو اپنا ملک ہی خوبصورت لگتا ہے، پاکستان میں سب سے اچھی جگہ کراچی لگی ہے، اب تک دنیا کے پچیس تیس ملک دیکھ چکا ہوں۔ ظفر مسعود نے بتایا کہ پنجاب بینک کے دس ہزار سے زائد ملازمین اور تقریباً650برانچیں ہیں،باقی صوبوں میں بھی بینک آف پنجاب کی برانچیں بڑھانے جارہے ہیں۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں