44

ٹین بلین ٹری سونامی منصوبے کے تحت 2اہم پراجیکٹ پر کام ہی شروع نہ ہوسکا،دعوئوں کی قلعی کھل کر سامنے آگئی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)ٹین بلین ٹری سونامی منصوبہ کے تحت وفاقی دارالحکومت کیلئے پونے دو ارب روپے مالیت کے دو اہم منصوبوں بیوٹی فیکیشن آف اسلام آباد اور پلوشن لوڈ اسیسمنٹ نیٹ ورکنگ پر کام ہی شروع نہیں ہو سکا ،دونوں منصوبوں کی تکمیل کی مدت تین سال ہے۔شہرکی خوبصورتی میں اضافہ اورایئرکوالٹی بہتربنانے کیلئے پونے دو ارب کے منصوبوں پر کام شروع نہ ہو سکا،روزنامہ جنگ میں ساجد چوہدری کی شائع خبرکے مطابق اسلام آباد کی بیوٹی فیکیشن کا سوا ارب روپے مالیت کا منصوے پر کام ایم سی آئی نے کرنا ہے جس کے تحت آٹھ اہم شاہراہوں پر

لینڈ سکیپنگ کو بہتر بنانے سمیت درخت بھی لگائے جائینگے جس سے شہر کی خوبصورتی میں اضافہ ہو سکے گا، منصوبے کا پی سی ون بھجوایا گیا تھا جس پر اعتراضات آ گئے تھے اب دوبارہ پی سی ون منظوری کیلئے بھجوایا جا چکا ہے جبکہ پلوشن لوڈ اسیسمنٹ نیٹ ورکنگ منصوبہ پانچ سو ملین روپے کا ہے جس کو پاک ای پی اے نے مکمل کرنا ہے ، منصوبہ کے تحت وفاقی دارالحکومت کی ایئرکوالٹی کی مانیٹرنگ کیلئے آلات نصب کئے جانے ہیں ، پرانے آلات کی تبدیلی وغیرہ بھی شامل ہے ، منصوبے کا ایک مقصد واٹر کوالٹی کی بھی مانیٹرنگ شامل ہے ، منصوبے کا پی سی ون چار ماہ قبل منظور ہوا تھا مگر تاحال اس منصوبے پر کام شروع نہیں ہو سکا ہے ، ڈائریکٹر جنرل پاک ای پی اے فرزانہ الطاف شاہ کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ اسکا پی سی ون ریوائز کرنے کیلئے کہہ دیا گیا ہے ، کوشش ہے کہ منصوبے پر جلد سے جلد کام شروع ہو۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں